Sunday, June 10, 2012

دکن کی شان میں مختلف شعراء کا کلام (دوسری قسط)


السلام علیکم
میرے اچھے بھائیوں اور پیاری بہنوں
ڈاکٹر محمد عبدالحی کی مرتبہ کتاب مملکت ٰاصفیہ سے اقتباسات کی دوسری قسط پیش خدمت ہے ۔ اس منظوم نزرانہ کو جناب حسام الدین خاں غوری نے مرتب فرمایا ہے۔

حیدرآباد فیض بنیاد

مشہور مرثیہ گو شاعر میرانیس ۱۸۷۱عسوی میں حیدرآباد دکن آئے ۔ مجلس میںذیل کی دو رباعیاں فی البدیہی پڑھیں۔۔

اللہ و رسول کی امداد رہے

سرسبز یہ شہر فیض بنیاد رہے


نواب ایسا رئیس اعظم ایسے

یا رب آباد حیدرآباد رہے


۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

موجود ہے جو کچھ جسے منظور ہے یاں

علم و عمل و عطا کا دستور ہے یاں
مختار الملک اور بند گانِ عالی

رحمت رحمت یہ نور پُرنور ہے یاں



ملجاہ و ما وائےجہاں

مولانا خواجہ الطاف حسین حالی کی کلیات میں دکن کی ادبی سرپرستی داد و ہش کے بارے میں بھر پور مخلصانہ حقیقت افروز اشعار ملتے ہیں ۔ حالی نے صحیح طور پر دکن کو دیکھا

اسماں جاہ ہے تقویت ملک دکن

اور ہے ملک دکن ملجاہ و ما وائے جہاں


یہ مقولہ ہند میں مدت سے ہے ضرب المثل

جو کہ جا پہچا دکن میں بس وہیں کا ہو رہا



پارسی ، ہندو ، مسلماں یا مسحی ہو کوئی

ہے دکن کو ہر کوئی اپنی ولایت جانتا



شمع فروزند

۔۔۱۸۹۱عسوی میں علامہ شبلی نعمانی حیدرآباد دکن آئے ۔ خوب قدر و منزلت ہوئی ۔ آپ نے حیدرآباد پر بہت سی نظمیں اور قصیدے فارسی زبان میں لکھے ، چند شعر ملاحظہ ہوں ۔۔



اے دکن !اے کہ جہاں را سر و سودا باتسُت

اے کہ مجموعہ ، صد یاس و تمنا باتسُت


اے کہ صد نقش زہر پردہ بر انگیختہ

اے کہ صد جلوہ گری بائے تماشا باتسُت


اے بزرگاں گراں پایہ وارکانِ دکن

اے کہ بر شمع فروزندہ ایوانِِ دکن


بر سرِ موئے مَن، امروز زبانے شدہ است

بہ سپاس آوری منتِ اعیانِ دکن



شہر حیدرآباد دکن

حضرت داغ دہلوی جو شہر یارر دلن میر محبوب علیخان آصف سادس کے استاد تھے ۔ حیدرآبد دن آکر حیدرآباد ہی کے ہو رہے ۔ شہر حیدرآباد ، وہاں کی آب و ہوا ،ماحول ،پھل پھول اور دیگر امتیازی خصوصیات پر سینکڑوں اشعار لکھے ،ان میں سے چند ملاحظہ فرمائیے ۔۔

دلی میں پھول والوں کی ہے ایک سیر داغ

بلدے میں ہم نے دیکھ لی سارے جہان کی سیر


نر گسِ باغ کو بھی ہم نے نہ دیکھا بیمار

حیدرآباد کی کیا آب و ہوا اچھی ہے


شہر ہے گلزایوں خلق ہت گلرنگ یوں

جیسے چمن در چمن باغ میں پھولے گلاب


بلدے کا اِک اِک مکاں اس میں دارالاماں

شہر کی ایک ایک گلی جادہ راہ ِ صواب


حیدرآباد ہے جنت سے سِوا دار الامن

کھا کے گندم نہ یہاں سے کبھی آدم نکلے


کھل جائیں آنکھیں دیکھتے ہی اس چمن کے پھول

رضواں کو ہم دکھائیں جو باغِ دکن کے بھول


نہیں حیدرآباد پیرس سے کچھ کم

یہاں بھی سجے ہیں مکاں کیسے کیسے


نہ گرمی ، نہ کہیں حد سے سردی

حیدرآباد میں ہے فصل کا ایسا عالم


حیدرآباد رہے تابہ قیامت قائم

یہی اب داغ مسلمانوں کی اِک بستی ہے



خطہء جنّت فضا

۱۹۱۰عسوی میں علامہ محمد اقبال حیدرآباد دکن آئے ۔ اس سفر کی یاد گار میں دو معرکتہ الآراء طویل نظمیں جو رسالہ ،خزن لا ہور میں شائع ہوئیں ۔ یہاں ان کی ایک نظم سے چند منتخب اشعار درج کئے جارہے ہیں ۔

کچھ تو کہہ ہم سے بھی اس وارفتگی کا ماجرا

لے گیا تجھ کو کہاں تیرا دلِ بے اختیار


کس تجلی گاہ نےکھیجا تیرا دامان ِ دل

تیری مشتِ خاک نے کس دیس میں پایا قرار


کیا کہوں اس بوستان غیرت فردوس کی

جس کے پھولوں میں ہوا اے ہمنوا میرا گزار


جس کے ذرّے مہر عالم تاب کو سامانِ نور

جس کی طور افزوزیوں پر دیدہ موسٰی نثار


جس کے بلبل عندلیب عقل گل کے ہمسفر

جس کے غنچوں کے لئے رخسار حورآئینہ دار


خطہ جنت فضا جس کی ہے دامن گیردل

عظمتِ دیرینہ ہندوستان کی یادگار


جس نے اسم اعظم محبوب کی تاثیر سے

وسعت عالم میں پایا صورتِ گردوں وقار


نور کے ذرّوں سے قدرت نے بنا یا یہ زمیں

آئینہ بن کے دکن کی خاک اگر پائے فشار



دیار محترم

جن کی شاعری حیدرآباد دکن کے علمی ماحول میں پروان چڑھی اور جوان ہوئی ۔ جب سقوط حیدرآباددکن کے بعد ۱۹۵۵عسوی مین اپنے وطن ثانی کولوٹے تو ان کےقلب میں یہاں کے ذرہ ذرہ سے بے پناہ محبت تھی جس تھی جس کا اظہار ایک طویل نظم میں کیا ۔ چند اشعار پیش ہیں ۔

حیدرآباد ،اےنگارگل بداماں السلام

السلام اے قصّہ ماضی کے عنوان السلام


تونے کی تھی روشنی میری اندھیری رات میں

مہرو ماہ خوابیدہ ہیں اب بھی ترے ذرّات میں


میرےقصرِزندگی پر اے دیارِ محترم

تونے ہی ذلفیں سنواری تھیں میرے افکار کی


تو ہی میرے روبرو اِک آن سے پر تول کر

مسکرایا تھا محبت کا دریچہ کھول کر


ولولوں میں تیرے نغموں کی روانی آئی تھی

تیرے باغوں میں ہوا کھا کر جوانی آئی تھی


اے دکن تیری زمیں کی رنگ رلیاں دل میں ہیں

پہلے جو زیرِقدم تھیں اب وہ گلیاں دلمیں ہیں


اسلام اے بزم یاراں اے دیارِ دوستاں

آج اٹھارہ برس کے بعد آیا ہوں یہاں


وہی ہے رخشِ وقت کو گردوں نے ایک مدتمیں ایڑ

کل جوان رخصت ہوا تھا آج پلٹا ہوں ادھیڑ


لیکن اے میرے چمن میری جوانی کے چمن

اے دکن نسرین دکن سنبل دکن سوسن دکن


تجھ میں غلطاں ہے مرے دل کی کہانی آج بھی

پُر فشاں تجھ میں ہے میری نوجوانی آج بھی


اب بھی عثمان ساگر کی ہواوں میں خراش

اب بھی آتی پہاڑوں سے صدائے جوش جوش


اس فضا میں ہے قیامت کا ترنم آج بھی

ثبت ہے ایک دشمن جان کا تبسم آج بھی


  
ولولے ناچے تھے جو گھنگھرو پہن کر پاوں میں

آج رقصاں ہے تیری بدلیوں کی چھاوں میں




آو سینے سے لگ جاو یارانِ دکن

پیشتر اس کے کہ روئے جوش کو ڈھاپنے کفن




شہرِ گوہریں حیدرآباد دکن

محترمہ سروجنی نائیڈو کانگریس کی ممتاز اور ہر دلعزیز رہنما کی انگریزی نظم 
کا ترجمہ از حبیب اللہ رشدی۔۔

اَے گل ِرنگین ، عشرت کے مکاں میرے وطن

تو میرے فکر و تخیل کا ہے اَک کانَ عدن


  
میرے دل میں تیرے الفت کا جو ہے طوفان بپا

آہ ہو سکتا ہے نہیں کوئی بھی اس سے آشنا


حُسن وخوبی ہے تِری دِل میں جو فطرت نے بھری

ہاں اسی چشمے سے میری زندگی پیدا ہوئی


کیا یہ میرا جسم پتلا خاک کا تیری نہیں؟

کیا تیری پاکیزہ مٹی سے مری مٹی نہیں؟




زندگی کے نخل نے میرے نہیں پائی ہے کیا

تیرے چشموں کے مصفّٰا آب سے نشو ونما




کیا تیرے صحرا میں سحر آگیں پہاڑی نے کبھی

اپنی فکر انگیز رونق سے مجھے لوری نہ دی


آہ ! اب میں گرچہ اک تکلیف دہ غربت میں ہوں

اور آوارہ بہت تیرے غم ِفرقت میں ہوں


پھربھی کیا میرے دل میں محزون کا تو معبد نہیں

جستجو تیرے لئے کیا روح کا مقصد نہیں !۔


۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
بلبلِ ہند کے اس کلام کے بعد اس قسط کو یہاں ختم کرتی ہوں ان شاءاللہ یہ سلسلہ جاری ہے ۔امید کہ آپ لوگ ضرور اسے پڑھکر محظوظ ہوئے ہونگے ۔ میرے بلاگ پر آنے کے لئے شکریہ ۔ خوش رہیے سدا۔۔۔۔۔۔۔۔۔



0 comments:

Post a Comment

اردو میں تبصرہ پوسٹ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں۔